h1

Indian lawyer exposes how Indian Police creates fake terrorists with fake Pak links

December 19, 2009

Ahmed Quraishi

After the 2008 Mumbai attacks, the American-British [Am-Brit] media highlighted how Indian police had arrested two Indian Muslims who had links to the Kashmiri group Lashkar Tayyiba. But the Am-Brit media goes silent when the truth comes out and it turns out that Indian military intelligence is involved in creating fake terrorists and blaming them on Pakistan.

NEW DELHI, India—The Indian police authorities and the officials of India’s notorious intelligence agency RAW are known for creating fake terrorists with fake links to Pakistan. Ajmal Kasab & company were not the first in this exercise. RAW and Indian police are practicing this art for years now. In a recent development, a daring Indian lawyer exposed one such drama and proved how the Indian police and RAW officials frame innocent people to prove them to be terrorists from Pakistan.

According to details, criminal lawyer M. S. Khan succeeded in proving the innocence of two Indian men who were alleged to be associates of a Pakistan-based Lashkar-e-Tayyiba divisional commander.

Here is the Indian version of the story, with the usual spicy plot details that the Indians prefer in their film plots:

In September 2006, the Delhi Police received information that Pakistan-based divisional commander of the Lashkar-e-Taiba Mohammad Akmal alias Abu Tahir is planning to send his associates to Delhi and other parts of the country.

A team was constituted under late Inspector Mohan Chand Sharma to nab the terrorists, if they managed to enter the national capital. Following a tip-off, the Delhi police mounted a ‘technical surveillance’ and deployed ‘sources’ to track the terrorists. Surveillance reportedly revealed Mohammad Akmal sent one Mustafa along with another person to Delhi to carry out the mission. It further exposed that Mustafa and his associates were operating from their hideout at Mahipalpur.

On December 11, 2006, the police got a tip-off that the two men would come from Dhaula Kuan to Mahipalpur crossing. A Delhi police team was deployed at the spot. At 9.15 pm, the police informer spotted the two accused alighting from a blueline bus (number DL 1PB 0249) plying on route number 729 (Kapashera to Mori Gate).

Fifteen sticks of some yellow explosives, few detonators and Rs 6 lakh in Indian currency were reportedly seized from them. The terrorists were later identified as Gulzar Ahmed Ganai alias Mustafa and Mohammad Ameen Hazzam and were taken to Mumbai from where they allegedly received the explosives. “The charges against them, included planning and attempt to wage war against the country, collection of arms to wage war, possession of explosives, being members of a banned organisation,” MS Khan told an Indian journalist.

This is how he the Indian lawyer tore apart the police and Indian intelligence case in the court:

Prosecution: Secret information established the two accused were Lashkar militants.

Khan: Neither could they establish the nature of the information nor produce any supporting evidence.

Prosecution: The alleged terrorists were arrested on the basis of technical surveillance.

Khan: The cops were never able to establish the nature and scope of their surveillance.

Prosecution: The cops mentioned the ultras had a hideout in Mahipalpur area.

Khan: When asked the location of the hideout, the cops themselves were clueless.

Prosecution: The cops claimed to have arrested the terrorists from a bus around 9.15 pm and produced tickets as evidence.

Khan: When asked the bus conductor told the court that the bus was not even plying at that time and the tickets produced were from the lot used around 11.50 am.

Prosecution: The cops said the militants were there at Dhaula Kuan.

Khan: The police were clueless from where they came to Dhaula Kuan.

Prosecution: It was alleged that the ultras had come to collect hawala money amounting to Rs 6 lakh in cash.

Khan: No evidence was produced to establish who gave them the money and when.

Prosecution: The police said the accused had come to Delhi from outside.

Khan: They could not establish from where they came. Also, no evidence was produced to establish they went to Mumbai to acquire explosives.

Prosecution: The police produced photographs of the crime scene.

Khan: As stated earlier, the photographs were not of Mahipalpur and no cop could be seen in them.

Prosecution: ACP Sanjeev Yadav told the court that one Ganai told the police about the hideout in Mahipalpur on December 14.

Khan: Ganai was taken to Mumbai on December 13 by a Delhi police team. How could he have revealed anything?

Advertisements

5 comments

  1. In india it is very often that police catch muslims and present them as terrorists and put them under terrorists cases without presenting them in front of court for years and years..Muslims in india especially in metropolitan cities r too much terrorised and live as third class citizens.I being one of them feel the same as slave.In delhi,maharashtra it is the police which is highly communal.This inspector mohan chand sharma killed two muslim students in batla house new delhi and then was killed by one of his colleague and was blamed by delhi police that he was killed when terrorists fired back.Muslims in delhi r demanding enquiry but even the high court is not allowing enquiry in this fake encounter.There were 5 students living in a flat in batla house which is a posh muslim’s area (as per muslims standards in india but actually it is slightly better than slum of bombay).Delhi police killed two or three out of those five in front of all the media posing them as indian mujahideen in the month of ramazan 2008,those young muslim students hail from a district known as azamgarh in uttar pradesh(that is the only district where muslims r well offf as per indian muslims’s standard of living, thanks to their ppl living and earning in gulf countries) but when muslims in the locality got suspicious they made protests and till date no enquiry has been set up.You can guess what a pathetic condition muslims r surviving in this part of world.


  2. @Salman Khan, we are always with you guys, hold on!


  3. BHARAT A BIG LIAR AN EPICENTRE OF TERROR

    بھارت کے ساتھ مذاکرات کی بے کار فکرمندی
    ـ 3 گھنٹے 50 منٹ پہلے شائع کی گئی بھارت میں تعینات پاکستان کے ہائی کمشنر شاہد ملک نے بھارت کو باور کرایا ہے کہ اس نے مذاکرات بحال نہ کرکے شرم الشیخ اعلامیہ سے انحراف کیا ہے۔ گزشتہ روز ایک بھارتی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان کے بارے میں بھارت کا رویہ روز بروز سخت ہوتا جا رہا ہے اور شرم الشیخ اعلامیہ بھارتی رویہ کی وجہ سے ہی التواء میں چلا گیا ہے۔ جبکہ بھارت کے منفی رویہ کے باعث انتہا پسند اور دہشت گرد مضبوط ہوئے ہیں۔ ان کے بقول دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ کئی امورپر مسلسل رابطے میں ہیں مگر اس کے باوجود مذاکرات شروع نہیں ہو رہے۔ بھارت پاکستان سے مسلسل ’’ڈومور‘‘ کا مطالبہ کر رہا ہے مگر خود کچھ نہیں کر رہا۔ انہوں نے واضح کیا کہ ممبئی حملوں کے بارے میں بھارت نے کوئی ٹھوس شواہد نہیں دیئے جبکہ جماعت الدعوۃ کے حافظ سعید کو بھارت بلاوجہ ملوث کر رہا ہے۔
    یقینا مذاکرات کی میز پر بیٹھ کر ہی متنازعہ معاملات اور پیچیدہ مسائل کا حل ممکن ہوتا ہے مگر مذاکرات کی میز پر بیٹھنے سے پہلے یہ بھی تو طے ہونا چاہئے کہ کس ایشو پر مذاکرات ہونے ہیں۔ اگر ایک فریق اپنی ہٹ دھرمی کی بنیاد پر کسی ایشو کو ایشو اور کسی تنازعہ کو تنازعہ تسلیم کرنے پر آمادہ نہ ہو تو اس کے ساتھ مذاکرات کی میز پر بیٹھنے سے بھی کیا حاصل ہوگا۔ پھر نہ جانے ہمارے حکمران اپنے ازلی اور مکار دشمن بھارت کے ساتھ مذاکرات کے شوق میں کیوں مبتلا ہو کر کیوں دبلے ہوتے جا رہے ہیں۔ مذاکرات کی میز پر بیٹھ کر اگر بھارت نے کشمیر کو اپنا اٹوٹ انگ ہی قراردینا ہے اور کشمیری عوام کے حق خودارادیت سے متعلق یو این قراردادوں کو کبھی خاطر میں نہیں لانا تو اس کے ساتھ مذاکرات مذاکرات کھیلنے سے کیا حاصل ہوگا۔ یہ حقیقت ہے کہ مکار ہندو بنیاء کہہ مکرنیوں میں یدطولیٰ رکھتا ہے۔ اس نے آج تک تخلیق پاکستان کو بطور حقیقت تسلیم و قبول ہی نہیں کیا اور اس کا خبث باطن ہمیشہ اس ملک خداداد کی سالمیت کو نقصان پہنچانے پر ہی مرکوز رہا ہے اس لئے اس کے ساتھ مذاکرات کی میز پر بیٹھ کر بھی خیر کی کیا توقع کی جاسکتی ہے جبکہ مذاکرات کے عمل کو بھارت نے ہمیشہ پاکستان کی کمزوری سے تعبیر کرتے ہوئے محض وقت گزاری کا ذریعہ بنایا ہے۔
    جب یو این قراردادوں کے ذریعہ مسئلہ کشمیر کا قابل عمل حل طے کردیا گیا ہے تو اس مسئلہ کے حل کیلئے بھارت سے مذاکرات کی بھیک مانگنے کی کیا ضرورت ہے کیونکہ یہ مسئلہ تو بھارت خود اقوام متحدہ میں لے کر گیا تھا جس کی ریکوزیشن پر یو این جنرل اسمبلی نے قرارداد منظور کرتے ہوئے کشمیری عوام کے استصواب کے حق کو تسلیم کیا اور بھارت کو کشمیر میں رائے شماری کرانے کیلئے کہا مگر بھارت نے الٹا کشمیر پر بزور تسلط جما لیا اور نہتے کشمیری عوام بشمول بچوں اور عفت مآب خواتین پر ظلم و جبر کا وہ بازار گرم کیا کہ وہ تحریک آزادی چلانے پر مجبور ہوگئے۔ اگر کشمیری عوام نے یو این قراردادوں کی روشنی میں اپنے استصواب کے حق کیلئے شروع کی گئی جدوجہد بے بہا قربانیاں دے کر صبر و استقامت کے ساتھ گزشتہ ساٹھ برس سے جاری رکھی ہوئی ہے تو کیا بھارت کے ساتھ مذاکرات کی میز پر بیٹھ کر مسئلہ کشمیر کا کوئی حل نکالنا اس عظیم جدوجہد کا نعم البدل ہوسکتا ہے؟ جبکہ مذاکرات کا ڈھونگ پاکستان سے الحاق کی تمنا رکھنے والے کشمیری عوام کی اس پرعزم جدوجہد کو کمزور بنانے اور انہیں پاکستان سے مایوس کرنے کے حوالے سے بھارت ہی کی ضرورت ہے، پھر بھی وہ ہمارے ساتھ مذاکرات کی میز پر بیٹھنے سے بدکتا ہے اور کسی نہ کسی حیلے بہانے سے یہ میز الٹا دیتا ہے، مگرہمارے حکمران چاہے وہ فوجی آمر ہوں یا سلطانی ٔ جمہور والے ہوں، ملک و ملت کے اس کمینے اور شاطر دشمن کی جانب دوستی کا ہاتھ بڑھانے اور اس کے ساتھ مذاکرات کا شوق پورا کرنے کیلئے ہمیشہ بے تاب نظر آتے ہیں۔ اگر تو بھارت یو این قراردادوں کے مطابق کشمیری عوام کو استصواب کا حق دینے کے کسی فارمولے کو قابل عمل بنانے کیلئے مذاکرات پر آمادہ ہوتا ہے تو بے شک اس کے ساتھ مذاکرات کئے جائیں تاہم وہ کشمیر کو بھول جائو کا نعرہ لگا کر ہمارے ساتھ مذاکرات کی میز پر آتا ہے تو کیا یہ مذاکرات خطے میں اس کی تھانیداری قائم کرانے اور بالادستی تسلیم کرانے کیلئے کئے جائیں گے؟۔اس کے مادر پدر آزادہندوئوانہ کلچر کو فروغ دینے اور اپنی مارکیٹوں پراس کا تسلط قائم کرانے کیلئے کئے جائیں گے اور کیا یہ مذاکرات مکار ہندو بنیاء کو اسلامیان پاکستان سے اپنی ہزار سالہ غلامی کا مزید بدلہ لینے کا موقع فراہم کرنے کیلئے کئے جائیں گے۔ کیا بھارت آج تک اپنے کسی ایک وعدے یا اعلان پر قائم رہا ہے کہ اس پر پھر اعتبار کرلیا جائے جبکہ اس کی کوشش تو ہمیشہ پاکستان کی آزاد اور خودمختار حیثیت کو ختم کرانے اور دنیا کے نقشے سے اس کا نام مٹوانے کی رہی ہے جس کیلئے وہ اب تک ہم پر تین جنگیں مسلط کر چکا ہے، ایک گھنائونی سازش کے ذریعہ مشرقی پاکستان کو ہم سے الگ کر چکا ہے اور اب وہ باقیماندہ پاکستان کے بھی درپے ہے۔ اگر خدا کے فضل و کرم، قومی سیاسی قائدین کی بصیرت اور اپنے قابل فخر سائنسدانوں کی محنت شاقہ سے ہم ایٹمی قوت سے سرفراز نہ ہوتے تو ہمارا یہ موذی دشمن ہمیں کب کا ہڑپ کر چکا ہوتا۔ اب اسے ہماری جغرافیائی سرحدوں کی جانب آنکھ اٹھانے کی تو جرأت نہیں ہوتی مگر وہ آبی دہشت گردی کے ذریعے ہمارا پانی روک کر ہمیں بھوکا پیاسا مارنے اور ہماری زرخیز دھرتی کو ریگستان بنانے کی مذموم سازشوں کو ضرور عملی جامہ پہنانے میں مصروف ہے۔ ان سازشوں کی تکمیل وہ کشمیر پر بزور اپنا تسلط برقرار رکھ کے ہی کرسکتا ہے تاکہ ہماری شہ رگ اس کے خونی پنجہ میں جکڑی رہے۔ اس مقصد کیلئے اس نے نہتے کشمیری عوام کو دبا کے رکھنے کا کون سا حربہ اختیار نہیں کیا اور انہیں ہم سے بدگمان کرنے کیلئے کون سی کسر نہیں اٹھا رکھی، کشمیر میں عرصہ دراز سے تعینات اس کی سات لاکھ افواج نے وہاں انسانی ظلم و جبر کی اب تک بے شمار داستانیں رقم کی ہیں مگر پر عزم کشمیری عوام کے حوصلے پست نہیں کئے جاسکے۔ گزشتہ دنوں بھارتی وزیر داخلہ چدم برم نے یہ بڑ ماری کہ کشمیر سے 30 ہزار سے زائد بھارتی افواج واپس بلوائی گئی ہیں۔ میر واعظ عمر فاروق نے تصدیق کی ہے کہ انہوں نے کوئی ایک بھارتی فوجی بھی کشمیر سے واپس جاتے نہیں دیکھا۔
    جس شرم الشیخ اعلامیہ کی پاسداری کا پاکستان کے ہائی کمشنر تقاضہ کر رہے ہیں، اس کی تو شرم الشیخ کانفرنس میں ہی بھد اڑا دی گئی تھی۔ ہندو بنیاء کے چیلے منحنی بھارتی وزیراعظم منموہن نے اس کانفرنس میں وزیراعظم پاکستان سید یوسف رضا گیلانی کو یقین دلایا کہ وہ بلوچستان میں بھارتی مداخلت کے فراہم کردہ ثبوتوں کی بنیاد پر کارروائی عمل میں لائیں گے۔ بھارت واپسی پر ہندو بنیاء کی جانب سے ان پر دبائو بڑھا اور انہیں ان کی’’اوقات‘‘ یاد دلائی گئی تو وہ لوک سبھا کے ایوان میں پاکستان کے ساتھ کئے گئے اس دعوے سے صاف مکر گئے۔ کیا اب ان سے یہ توقع رکھی جاسکتی ہے کہ ہمارے ساتھ مذاکرات کی میز پر بیٹھ کر کئے گئے کسی وعدے کی پاسداری کی جائے گی۔ یہ موذی سانپ اور کچھ نہیں کرے گا، ہمیں صرف ڈنک مارنے کا فرض ہی پورا کرے گا۔ پھر ہمارے حکمرانوں کو بار بار اس سانپ سے ڈسوانے کا شوق کیوں چڑھا ہوا ہے۔
    اندریں حالات ہمیں بھارت کو یہ باور کرانا چاہئے کہ جب تک وہ یو این قراردادوں کی روشنی میں کشمیری عوام کو استصواب کا حق نہیں دیتا، اس کے ساتھ کسی قسم کے مذاکرات ہوں گے نہ تجارت، البتہ کشمیری لیڈر شپ کے پاکستان آنے میں کسی قسم کی رکاوٹ نہیں ہونی چاہئے۔ مقبوضہ کشمیر کی پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کی سربراہ محبوبہ مفتی کو اسلام آباد کی ایک کانفرنس میں شرکت کیلئے پاکستان کا ویزہ نہ دینا انتہائی افسوسناک ہے۔ صدرآصف علی زرداری کو اپنی اس کشمیری بہن کے ساتھ دفتر خارجہ کے’’ حسن سلوک‘‘ کا خودہی نوٹس لینا چاہئے اور انہیں فی الفور پاکستان کا ویزہ جاری کرانا چاہئے کیونکہ اخباری اطلاعات کے مطابق میر واعظ عمر فاروق نے بھی ویزہ نہ ملنے کے خدشہ کے باعث اپنا دورہ پاکستان مئوخر کردیا ہے۔ ہمارے قومی مفادات کا تو یہ تقاضہ ہے کہ بھارت سے مذاکرات کیلئے تڑپنے کے بجائے اپنے کشمیری بھائیوں کی جدوجہد کا ساتھ دیا جائے اور دانستہ یا نادانستہ ایسا کوئی اقدام نہ کیا جائے جس سے ہمارے بارے میں ان کی بدگمانیوں میں اضافہ ہوتا ہو۔ اس لئے قومی مفادات کو پیش نظر رکھیں اور اپنے موذی دشمن بھارت کو صاف جواب دے دیں۔


  4. What a bunch of crap!
    Dont insult the profession of journalism by inventing such crap.
    And stop blaming India for EVERYTHING.


  5. hahhaha….. ROFL LMAOFF.
    Good 1 guys!! you rock!! lol



Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: